Home / صحت / بیماریاں / بےخوابی ایک عادت نہیں بیماری ہے

بےخوابی ایک عادت نہیں بیماری ہے

کہتے کہ نیند تو سولی پر بھی آ جاتی ہے مگر کچھ لوگ نرم بستر پر بھی نہیں سو پاتے ہی جانتے ہیں کیوں ؟insomnia ایک بیماری کا نام ہے۔ یہ بےخوابی کی ایسی حالت کا نام ہے جس میں انسان سرے سے سو ہی نہیں پاتا یا پھر بہت کم سوتا ہے اگر اس کا صحیح وقت پر علاج نہ ہو تو اس سے انسان کی صحت کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔ سائنسی تحقیق کے مطابق ہر عمر کے لوگوں کے لئے مختلف ہے۔
بچوں کیلئے نو سے گیارہ گھنٹے کی نیند جب کہ نوجوانوں کے لیے 7 سے 9 گھنٹے کی نیند اور بوڑھے کے لئے جن کی عمر 65 سال سے زیادہ ہو ان کیلئے سات سے آٹھ گھنٹے کی نیند صحت کے لئے ضروری ہے۔
نیشنل سلیپ فاونڈیشن امریکا کی ایک آرگنائریشن ہے جو انسانی صحت پر نیند کی اہمیت کے حوالے سے اپنی ویب سائٹ کے ذریعے لوگوں کو آگاہی فراہم کرتی ہے۔اس آرگنائزیشن کا مقصد لوگوں کو نیند کے فوائد بتانے کے ساتھ ساتھ ان کی سرگرمیوں کے حوالے سے معلومات فراہم کرنا ہے جو لوگوں کی نیند کے ذریعے بہتر صحت بناتی ہے ۔
ماہرین نے insomnia کی کی نشانیاں بتائیں ہیں جس میں رات کو بہت مشکل سے سونا یا آدھی رات کو بار بار اٹھ جانا صبح دوپہر کے وقت میں خود کو انتہائی تھکاوٹ کی حالت میں محسوس کرنا کسی بھی کام کا بوجھ سمجھنا یا اس کام کےکرنے میں وقت محسوس کرنا یہ تمام باتیں insomnia نامی بیماری کی جانب اشارہ کرتی ہیں ۔
اکثر لوگ بے خوابی کا شکار اپنی مصروفیات کی وجہ سے ہوتے ہیں جس میں تعلیم سے لے کر روزگار کے تمام شیڈول ساتھ لے کر چلتے ہیں یا پھر گھر میں ہونے والی کسی بھی تقریبات کی ذمہ داری کی وجہ سے رات بھر منصوبہ بندی کرتے رہتے ہیں، جو کہ ان کی نیند میں رکاوٹ کا سبب بنتا ہے۔
کچھ لوگ اپنے گھر یا خاندان میں ہونے والے مسئلوں کی وجہ سے پریشان ہوتے ہیں ان کی یہی پریشانی انھیں نیند سے دور کردیتی ہے۔ اگر ہم بات کریں بزنس مین یا پیشہ ور لوگوں کی تو ان کے لیے بے خوابی کا شکار ہونا ایک عام سی بات ہوتی ہے۔کیونکہ کئی کئی دنوں تک مختلف میٹنگز یا پھر کسی بھی مشکل شیڈول کی بنا پر وہ اپنے لیے وقت نہیں نکال پاتے اور ان کا مقصد ان کی ساری توجہ صرف اپنے کاروبار کی حد تک محدود ہوکر رہ جاتی ہے۔
یہ بیماری ہر عمر کے لوگوں کو ہو سکتی ہے چاہے وہ بچے ہوں اور بوڑھے ہوں یا پھر نوجوان۔اگر آج کے دور کی مثال لی جائے تو یہ بیماری بچوں کے عام نظر آتی ہے۔ لیکن وہ اسے اپنی روزمرہ کی زندگی کا حصہ سمجھتے ہیں۔ جبکہ سائنس یہ بات ثابت کرچکی ہے کہ موبائل فونز کا رات گئے تک استعمال یا پھر ٹی وی کی اسکرین یا ویڈیو گیم کی عادت نے بچوں کی نیند خراب کر دیا ہے بظاہر تو یہ لگتا ہے کہ وہ اپنا شوق پورا کر کے پھر سوتے ہیں لیکن حقیقت انہی چیزوں کا استعمال انھیں نیند سے دور کردیتا ہے ۔
بہت سے لوگوں کی یہ عادت ہوتی ہے کہ وہ رات کے کھانے میں ہلکا کھانے کے بجائے پیٹ بھر کے کھاتے ہیں اور انسان پیٹ بھر کے کھانے کے بعد سکون سے نہیں سوپاتا کیونکہ کھانے کے بعد لیٹنے سے کھانا ہضم نہیں ہوتا غرض سے یہ چھوٹی چھوٹی باتیں جنھیں آج کے دور میں مکمل طور پر نظر انداز کر دیا جاتا ہے۔لوگ اپنی مرضی سے سوتے اور جاگتے ہی نیند صحت کو بہتر بناتی ہے اگر انسان رات میں سکون سے نہیں سوپاتا تو اگلا پورا دن میں ہونے کے باوجود روزمرہ کے کام مجبورً کررہا ہوتا ہے جو اس کی صحت کے لیے نقصان دہ بن جاتا ہے ۔

admin

Author: admin

Check Also

فالج کی چند خاموش علامات

فالج ایسا مرض ہے جس کے دوران دماغ کو نقصان پہنچتا ہے اور جسم کا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے