Home / متفرق مضامین / نعتِ رسولِ مقبولﷺ اور سماع

نعتِ رسولِ مقبولﷺ اور سماع

آغا شورش کاشمیری
(راگ باگیشری)
اعلیٰ حضرت پیر مہر علی شاہ (گولڑہ شریف) کی اس نعت پر میں نے ہفتوں نہیں بلکہ مہینوں سوچا ہے ۔میری حالت یہ ہے کہ میرے سامنےقوال جب یہ نعت پڑھتے ہیں تو میں از خود رفتہ ہو کر دور دراز کی وادیاں قطع کرنے لگتا ہوں۔ عقل کی باریکیوں سے انکار نہیں ، اسے اپنی محفلیں سجانے پر جو قدرت ہے ، اس کے نقش و نگار ہم ہر لحظہ اپنے گرد پاتے ہیں۔ اس دور کا انسان عقل کا انسان ہے۔ وہ عقل کے سہارے جی رہا ہے اور عقل کے تھپیڑوں سے مر رہا ہے۔

 لیکن عشق۔۔۔ عقل کی جان کنی اور روح کی معراج ہے ، اور یہ معراج کئی بیابانوں کی مسافت اور کئی آسمانوں کی سیاحت کے بعد حاصل ہوتی ہے۔

جسے دیوانگی کہتے ہیں الفت کی نبوت ہے

غنیمت ہے جو صدیوں میں کوئی دیوانہ ہوجائے

عقل نے سماع کی مخالفت میں ہمیشہ زبان درازی سے فائدہ اٹھایا ہے ۔ لیکن سماع یوم الست سے یوم قیامت تک زندہ ہے۔ اسے وقت کی کوئی رفتار اور زمانہ کا کوئی سانحہ نہیں مٹا سکا۔ سماع دلوں کی سنگینی کو نرم کرنے اور طبیعتوں کی گھٹن مشیتِ الہیٰ سے شگفتہ رکھنے کی ایک دل آویز فصل ہے ۔

(قلم کے چراغ)

admin

Author: admin

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے