Home / گوشئہ اطفال / بچوں کی کہانیاں / غرور کا سر نیچا

غرور کا سر نیچا

ایک دفعہ کا ذکر ہے کسی گاؤں میں ایک تاجر رہتا تھا ۔ جو روزانہ پیدل شہر آتا اور پیدل ہی واپس چلا جاتا ۔ ایک دن شام کو بہت سخت بارش ہو رہی تھی ، اور اس نے سوچا آج میں بس کے ذریعے گھر واپس چلا جاتا ہوں۔ پھر وہ پیدل بس سٹاپ تک گیا لیکن بس میں بیٹھے تاجروں نے اسے بس میں بیٹھنے سے منع کر دیا ۔ اس نے کہا مجھے بس میں بیٹھنے باہر بارش ہو رہی ہے میں گھر کیسے جاؤں گا۔ اس نے ان کے آگے ہاتھ جوڑے ۔ انہوں نے خود پر بہت فخر محسوس کیا اور غرور کیا۔ ان تاجروں میں سے ایک تاجر نے اسے بس میں بیٹھنے کی اجازت دے دی۔ وہ ایک نیک آدمی تھا ۔ لیکن باقی تاجروں نے اسے بس میں بیٹھنے تو دے دیا لیکن اس سے کہا تم نیچے بیٹھ جاؤ۔ وہ غریب تاجر نیچے بیٹھ گیا۔آدھے راستے میں گاڑی کا ٹائر کیچڑ میں پھنس گیا۔ تاجروں نے کہا کہ یہ سب اس کی وجہ سے ہوا ہے۔ ایک تاجر نے کہا کہ سب لوگ باری باری اس پیڑ کے نیچے جائیں اور جو گناہ گار ہوگا اس پر بجلی گرے گی اور وہ جل کر راکھ ہوجائے گا۔ سب تاجر باری باری گئے اور صحیح سلامت واپس آگئے ۔ آخر میں ان دونوں کی بار ی تھی ۔ وہ دونوں پیڑ کے نیچے گئے تو زور سے بجلی کڑکی اور بس پر جاپڑی اور تمام تاجر جل کر راکھ ہوگئے ۔
اس کہانی سے ہمیں یہ سبق ملتا ہے کہ غرور کا سر ہمیشہ نیچا ہو تا ہے۔

 

admin

Author: admin

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے