Home / خبریں / ٹاپ سٹوری / ٹینس میں تاریخ رقم کرنے والے ”راجر فیڈرر“ کی داستاں

ٹینس میں تاریخ رقم کرنے والے ”راجر فیڈرر“ کی داستاں

کہنے والے کہتے ہیں اگر انتھک محنت،جذبہ ،لگن،خوداعتمادی اور مضبوط اعصاب یہ تمام صفات مل جائیں تو کامیابی یقینی ہوتی ہے۔سویٹزرلینڈ کے راجر فیڈرر کو عظیم کھلاڑیوں کی فہرست میں نمبرون بنے ہوئے ٩ سال کا عرصہ گزر چکا ہے، مگر اب بھی ان کا کھیل اسی آب وتاب سے جاری ہے۔یہ ٢٠٠٩ کی بات ہے کہ جب فیڈرر نے اپنا چھٹاومبلڈن ٹائیٹل جیتا تو یہ امریکہ کے پیٹ سیمپراس کے ١٤ گرینڈ سلام ٹائٹلز کے ریکارڈ کو توڑ کر دنیا میں سب سے زیادہ ١٥ گرینڈ سلام ٹائٹلز جیتنے والے کھلاڑی بن گئےتھے لیکن صرف یہی ریکارڈ فیڈر کی منزل نہیں تھی انہیں بہت آگے جانا تھا اس لیے اسکا سفر جاری رہا اور ٢٠١٢ میں ان کے ٹائٹلز کی مجموعی تعداد ١٧ ہو گئی۔ٹینس کے تاریخ ساز کھلاڑی ”راجر فیڈر“کے لیےاگلے ٤ سال خاصے مشکل رہے ۔انجری اور فٹنس مسائل سےدوچار ہونے کے باعث وہ کوئی بھی گرینڈ سلام نہیں جیت سکے اور یہ سمجھا جانے لگا کہ انکی بڑھتی ہوئی عمراشارہ دے رہی ہے کہ اب انکاکیریر اختتام پذیر ہے لیکن ہر بڑے کھلاڑی کا کم بیک ضرور ہوتا ہے اور یہی فیڈرر کے ساتھ ہوا جنہوں نے گزشتہ سال یعنی ٢٠١٧ سے ایک بار پھر کامیابوں کا سلسلہ شروع کیا اور اس دوران میں کھیلےگئے پانچ گرینڈ سلام میں سے ٣ میں فتح حاصل کی اور اپنی فتوحات کی تعداد کو ٢٠ کے ہندسے تک لے جانے میں کامیاب رہے۔

 

فی الوقت اپنی تاریخی کامیابی کے بعد راجرفیڈرران دنوں اپنی فیملی کے ساتھ آرام کر رہے ہیں اور آنےوالےاگلےسیزن کےمتعلق ابھی انہوں نے کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا ہے کیونکہ فیڈرر خود بھی جانتے ہیں کہ یہ انکا سب سے کمزورسرفیس ہے کہ جہاں وہ اپنے کیریر میں صرف ایک مرتبہ ہی کامیابی حاصل کرسکے ہیں کہ جب انہوں نے ٢٠٠٩ میں فرنچ ٹائٹل اپنے نام کیاتھا۔اگلے سیزن میں وہ اپنےپسندیدہ سرفیس یعنی گراسکورٹ پروہ پوری قوت کا مظاہرہ کرینگے اور اپنے ومبلڈن ٹائٹل کادفاع کرینگے۔گزشتہ سال فیڈرر نے ومبلڈن مقابلوں ٨ ویں فتح حاصل کرکے ایک نئی تاریخ رقم کی تھی۔

 

 

راجر فیڈرر کو  ٢٠ ٹائٹلز کےعلاوہ ١٠ مرتبہ گرینڈسلام فائنل کھیلنے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔یعنی مجموعی طورپر ٣٠ مرتبہ گرینڈسلام مقابلوں  میں فائنل  میں پہنچے ہیں۔اس سال آسٹریلین اوپن ٹورنامنٹ مجموعی طور پر اوپن ایرا کا ٢٠٠واں ٹورنامنٹ تھا اسکا مطلب  یہ ہے کہ تمام مقابلوں کو یکجا کیا جاۓ تو ١٠ کامیابی فیڈر کے حصے میں آئی ہے ۔راجر فیڈرر ٣٦ سال کی عمر میں آسٹریلین ٹائٹل جیتنےوالے دوسرے طویل عمر کھلاڑی ہیں  ۔١٩٩٢ میں کین روز ویل نے ٣٧ سال کی عمر میں ٹائٹل جیتا تھا ۔فیڈرر اگلےسال فتح حاصل کرلیں تو پھر ومبلڈن کی طرح یہ سب زیادہ آسٹریلین ٹائٹل جیتنے والے کھلاڑی بھی بن جائیں گے دوسال قبل تک جس رفتار سے رافیلنڈال فتوحات حاصل کر رہے تھے یوں لگ رہا تھا کہ وہ فیڈرر سے بھی آگے نکل جائیں گے لیکن نڈال بھی انجریز سے دو چار ہیں اور اب چونکہ فیڈراور نڈال کےدرمیان ٤ گرینڈ سلام ٹائٹل کا فرق ہو چکا ہے تو نڈال کےلیے آگے نکلنا اب مشکل سے مشکل تر ہو رہا ہے۔راجر فیڈیرر ٨ اگست ١٩٨٧ کو سویٹزرلینڈ کے شہر ہاسل میں پیدا ہوۓ۔١٩٩٨ سےپروفیشنل ٹینس کاسفر شروع کیا اور ٢٠٠٣ میں پہلی مرتبہو مبلڈن ٹائٹل اپنےنام کیا۔یہاں سے ان کےشاندارسفر کا آغازہوا جواب تک جاری ہے۔فیڈرر نے ٢٠ گرینڈ ماسٹر ٹائٹل جیتے ہیں ،چھ مرتبہ اے ٹی ورلڈ ٹوور فائنلزاور ٢٧ مرتبہ ورلڈٹوور ماسٹرز بھی جیت چکے ہیں ۔انہیں مجموعی طورپر ٣٠٢ ہفتوں تک عالمی نمبر ایک رہنے کا اعزاز حاصل ہے جس میں ٢٣٧ ہفتوں تک متواتر ورلڈ نمبرون کیپوزیشن پر براجمان رہے جوعالمی ریکارڈ ہے ۔

 

راجر فیڈرر ہمشہ ٹرافی وصول کرتے وقت مسکراتے ہوئے نظرآتے ہیں لیکن اس مرتبہ صورتحال مختلف تھی اور ٹرافی لیتے وقت انکی آنکھیں نم تھیں شاید یہ خوشی کے آنسو تھے جو وہ برداشت نہیں کرپارہے تھے۔انہوں نے اپنے آسٹریلیا مداحوں کا خصوصی شکریہ ادا کیا اور کہا ہے کہ وہ آئندہ سال بھی آسٹریلین اوپن میں شرکت کریں گے۔

 

 

 

 

راجر فیڈرر کی بیگم میرکافیڈرر بھی ٹینس کی کھلاڑی رہی ہیں اور گرینڈ سلام مقابلوں کے علاوہ ٢٠٠٠ کے سڈنی اولمپکس میں بھی حصہ لے چکی ہیں۔دلچسپ بات یہ ہے کہ راجراور میرکاکے یہاں دومرتبہ جڑواں بچوں کی ولادت ہوئی ہے ۔٢٠٠٩ میں ان کے یہاں جڑواں بیٹیوں کی پیدائش ہوئی  اور پھر ٢٠١٤ میں ان کے یہاں جڑواں بیٹے پیدا ہوئے۔اگر مستقبل میں ان کے بیٹےاور بیٹیاں ٹینس مقابلوں میں حصہ لیتے ہیں تو پھر سارے اعزاز انکی فیملی کا حصہ بن سکتے ہیں ۔کون جانے تاریخ رقم کرنےوالے فیڈرر آنے والی تاریخ کا حصہ بھی بن جائیں۔

 

 

admin

Author: admin

Check Also

پی ایس ایل 4: فائنل میں گلیڈی ایٹرزنے زلمی کو آٹھ وکٹوں سے شکست دے کر پہلی بار ٹائٹل اپنے نام کر لیا

پاکستان سپر لیگ کے چوتھے ایڈیشن کے فائنل میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کو یک طرف …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے